عمل اور مقصد




تحریر ۔۔ سالک وٹو         
 
 ہم جب بھی کوئی عمل کرتے ہیں ۔تو اس کا کوئی نہ کوئی مقصد یا مفاد ضرور ہوتا ہے ۔حتی کہ ہم گھر میں کوئی بٹن اگر بھی دباتے ہیں  تو اس کے پیچھے بھی کسی پنکھے یا بلب کے چلانے کا مقصد ہوتا ہے ۔اگر عمل سے مقصد یا نتیجہ نکال دیں تو عمل سوائے ایک ورزش کے کچھ بھی نہیں ۔
  جہاں با جماعت نماز کے بے شمار فوائد اور فضیلتیں ہیں وہیں پہ اس عمل کا ایک خاص مقصد بھی ہے ۔ہم اگر اسلام کے ابتدائی دور کو بغور دیکھیں تو اس وقت صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم   سارا دن رزق حلال کے لیے محنت مزدوری کرتے ۔پہاڑی علاقہ تھا ۔بھیڑ بکریوں اور اپنے اونٹوں کی خوراک کے لیے دور دراز تک جانا پڑتا تھا ۔لوگوں کے پاس مل بیٹھنے کے وقت کی بہت قلت تھی ۔  لوگ تجارت پہ نکل جاتے تو کئی کئی ماہ تک واپسی نہ ہوتی ۔اور بہت سے واقعات ملتے ہیں  جب مسافر بھوک اور پیاس کی وجہ سے ملک عدم   کی طرف کوچ کر جاتا۔تو اس وقت با جماعت نماز ایک ایسا عمل اور پلیٹ فارم تھا کہ جس میں سب لوگ اکھٹے ہوتے ۔ایک دوسرے کے حالات سے آگاہی ہوتی۔نبی پاک ﷺ  کی صحابہ کرام کی پاک جماعت کے ساتھ جو شخص باجماعت سے غیب رہتا اس  کی خبر گیری فرماتے کسی کو کوئی مدد درکار ہوتی یا کسی بیماری میں گھرا ہوتا تو مسجد میں پہنچ جاتا اور سب ایک دوسرے کا احساس کرتے ۔حتی کہ کافروں کے ساتھ جتنے معرکے ہوئے ان کی ساری ترتیب مسجد میں ہی بیٹھ کے کی گئی ۔اور اصحاب صفہ سے کو کون نہیں جانتا مسجد میں ہی ایک طرف وہ چبوترا تھا جس پہ وہ لوگ بیٹھتے جو اپنے گھر بار چھوڑ کر مسلمان ہوئے تھے ۔یا جن کا کوئی ظاہری سہارا نہیں تھا۔ ان کے کھانے پینے اور دوسری ضروریات کا بھی مل جل کے انتظام کیا جاتا                                                       باجماعت نماز کے بے شمار فوائد و ثواب کے ساتھ ساتھ اس عمل کا بنیادی مقصد ایک دوسرے کے حالات سے آگاہی ہے ۔اور آگاہی کے بعد ایک دوسرے کی مدد ہی اس عمل کا بنیادی مقصد ہے ۔نبی پاک ﷺ نے فرمایا کہ ۔خیر الناس من ینفع الناس (بہترین انسان وہ ہے جو دوسروں کے لیے سب سے زیادہ مفید ہو )                                                آج کل اس انتہائی اہم مقصد کو یکسر بھلا دیا گیا ہے ۔مسجد مین تو مولوی حضرات اور پرانے پکے سینئر نمازی آواز بھی نہیں نکالنے دیتے ہر طرف ہو کا عالم ہوتا ہے کسی کے حالات سے آگاہی کیسے ہو ۔اور مساجد میں اکثر لوگ تو ایک دوسرے کے نام سے بھی نا آشنا ہوتے ہیں ۔کافی عرصہ اکھٹے نماز پڑھتے ہوئے بھی ہم ایک دوسرے سے بالکل اجنبی رہتے ہیں ۔شاید یہی وجہ ہے کہ جب سے اس با برکت عمل کا مقصد الگ کر دیا گیا ہے تو اس عمل کے وہ ثمرات بھی نظروں سے اوجھل ہو گئے ہیں ۔                                                                                                                                    بلکہ آج تو ایک نئی بات سے واسطہ پڑا ۔ میں پچھلے کچھ دن سے ایک مسجد میں با جماعت نماز کی ادائیگی کے لیے جا رہا ہوں ۔ظہر اور عصر کی نماز کے فرضوں کی ادائیگی کے بعد با آواز بلند کلمہ شریف اور صلواۃ سلام کے چند صیغے سارے نمازی مل کے پڑھتے ہیں ۔میں نے آج امام صاحب سے عرض گزاری کہ حضور باقی نمازوں میں آپ یہ عمل نہیں دہراتے صرف ظہر اور عصر میں ہی کیوں یہ عمل کرتے ہیں ؟                                                                         تو فرمانے لگے ۔۔
۔ اصل میں بات یہ ہے کہ ہماری مسجد ایک ایسے علاقے میں ہے جہاں مختلف ماکیٹیں اور دکانیں ہیں اور زیادہ تر نمازی یہ دکاندار ہی ہوتے ہیں اہل محلہ تو بس چند لوگ ہی ہیں ۔ہمارے نمازیوں میں سے 2 نمازی ہیں جن کا عقیدہ غلط ہے وہ صرف ظہر اور عصر کی نماز اس مسجد میں پڑھتے ہیں ۔ اس لیے ہم صرف ان کو چوٹ کرنے کے لیے صلوۃ و سلام پڑھتے ہیں۔ میں نے کہا کہ یہ تو مناسب نہیں تو اس نے ایک شعر سنا دیا کہ                                                                                                      غیظ سے جل جائیں بے دینوں کے دل ؛                                                                                                         یا رسول اللہ ﷺ کی کثرت کیجیے                                                                        مولوی صاحب کا یہ جذبہ دیکھ کے میں تو سکتے میں رہ گیا ۔وہ مسلمانوں کی اعلی ظرفیاں اور کردار کہاں گم ہو گئے وہ محبت اور احساس کی دولت کس نے چھین لی ہم سے ۔آج کل سچے لوگوں کی باتیں کرنے والے کو ہی ہم کردار کا غازی سمجھ بیٹھے ہیں ۔کاش ہم با جماعت کے عمل کے مقصد کو سمجھ پائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ شکریہ  ۔۔ سالک وٹو۔
Post a Comment