۔شریعت ۔ طریقت ، معرفت اور حقیقت ۔

۔۔شریعت ۔ طریقت ، معرفت اور حقیقت ۔۔

تحریر ۔سالک وٹو۔۔۔۔۔۔۔۔شریعت ۔ طریقت ، معرفت اور حقیقت ۔۔
شریعت ۔ طریقت ، معرفت اور حقیقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس حوالے سے میں جو بھی بات کروں گا وہ میری اپنی بات ہو گی وہ میرا اپنا عقیدہ ہے وہ میرا اپنا راستہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔جو میں نے سمجھا ، جو میں نے دیکھا اور جو میں نے محسوس کیا ۔۔۔۔۔۔ہو سکتا ہے کوئی کتاب یا کوئی دوست میری اس بات کو تسلیم نہ کرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں کہ سب کا الگ الگ سفر ہوتا ہے
جیسے روح کا لباس جسم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسم کے بغیر روح ایک ماورائی سی چیز ہے ۔۔۔۔۔۔ایسے ہی ساری منازل کا لباس شریعت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شریعت کے بغیر کچھ بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔ہاں وہ لوگ جو پیدائشی اللہ یافتہ ہیں (مجذوب) وہ اس سے باہر ہیں
ہر انسان کو اللہ پاک نے پیدا کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پیدائش کے مقاصد کے حوالے سے مختلف جگہ پہ مختلف احکام فرمائے ۔۔۔
جیسے ۔قران پاک میں ہے ۔انسان اور جن میں نے اپنی عبادت کے لیے بنائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوسری جگہ فرمایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وعبد ربک حتی یاتیک الیقین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنے رب کی عبادت کر جب تک تو کامل یقین کو نہیں پا لیتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک اور جگہ فرمایا کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کنت کنز مخفیا۔۔۔۔میں ایک چھپا خزانہ تھا اور مجھے اپنے سے محبت ہوئی اور میں نے چاہا کہ میں پہچانا جاوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب انسان کی تخلیق کے مختلف مقاصد بیان فرمائے ۔۔۔جو حقیقت میں ایک ہی ہیں ۔۔۔۔۔کہ اللہ کی عبادت اور اس کی پہچان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر انسان کا اپنا مزاج ہوتا ہے ۔ سب کے جدا جدا دماغ اور سوچیں ہیں ۔۔۔۔۔اور کوئی ہر بات کو اپنے انداز میں سوچتا اور سمجھتا ہے ۔۔
سب انسان اللہ سوہنے کی پہچان میں نکلے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔اپنے اپنے مذہب کے رنگ میں ۔اپنے اپنے روپ میں کوئی جوگی کوئی سادھو ۔۔۔۔۔وغیرہ اور اللہ سوہنے کو پانے کا بس ایک ہی راستہ ہے جو ذات مصطفےﷺ پہ جا کے ختم ہوتا ہے
ہر کوئی سفر میں ہے ۔۔۔۔شریعت نبی پاک ﷺ کے راستے کو کہتے ہیں ۔۔۔جس طرح نبی پاک ﷺ نے عملی طعر پہ زندگی گزاری ۔۔
کچھ مسافر اپنی ساری زندگی بس اس عمل کی نقل میں گزار دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اور ان میں سے کچھ وہ ہوتے ہیں جو اس کھوج میں لگ جاتے ہیں کہ جب کوئی بھی عمل نبی پاک ﷺ کرتے تو اس وقت ان کی کیفیت کیا ہوتی ۔مطلب جو عمل کے ساتھ ہر عمل کی کیفیت بھی چاہتے اور مانگتے ہیں وہ شریعت کے ساتھ طریقت پہ بھی ہیں ۔۔۔۔۔۔شریعت عمل طریقت کیفیت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کچھ مسافر ایسے ہوتے ہیں جو شریعت کا لباس اوڑھ کے طریقت کی کیفیت بھی پا لیتے ہیں ۔۔لیکن ابھی تک ان کی روح پیاسی ہوتی ہے ۔وہ تشنگی محسوس کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو وہ اس کھوج اور جستجو میں جگ جاتے ہیں کہ عمل ٹھیک ہے بہت ضروری ہے ۔۔۔لیکن مزا تب ہے جب اس ذات کو پایا جائے جس کے لیے ہم شریعت کا لباس اوڑھے ہوئے ہیں اور جس کے لیے ہم طریقت کی کیفیت میں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مطلب ۔ شریعت لباس۔ طریقت کیفیت اور معرفت پہچان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ان مسافروں میں کچھ پاگل اور من موجی مسافر ایسے بھی ہوتے ہیں جو اس پہ بھی صبر نہیں کرتے اور حقیقت کا پردہ اٹھانا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے کہ اللہ پاک نے فرمایا کہ من عرف نفسہ عرف ربہ ۔ جس نے اپنے آُ کو پہچانا اس نے اپنے رب کو پہچانا ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک اور جگی یوں بھی اشارہ کیا کہ ۔۔۔۔الانسان سری وانا سرہ ۔( انسان میرا بھید اور میں انسان کا بھید ہوں ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور کچھ خاص مسافروں کے لیے یہ بھی اشارہ کیا کہ ۔۔۔۔ قلب الانسان بیت الرحمن (انسان کا قلب اللہ کا گھر ہے) ۔۔۔۔۔۔۔۔جسے صرف سمجھنے کےلیے ان مسافروں نے مختلف نام دیے ہیں ۔جن میں سے ایک ہے وحدۃالوجود ۔۔۔۔۔
مطلب ۔شریعت لباس ۔ طریقت ۔ کیفیت ۔ معرفت ۔ حاصل کی طلب اور حقیقت ۔ اللہ ہی اللہ ۔۔۔۔۔۔۔جیسے بابا بلھے شاہ نے فرمایا کہ ۔جہڑی شکل عین دی اوہو شکل غین ۔۔۔۔۔اک نقطے دا فرق ہ جانے بھلی بھرے کونین ۔۔
یہ بات یاد رہے کہ یہ سارا سفرلباس (شریعت) کے ساتھ طے کرنا ہے ۔شریعت نہیں تو سب لاحاصل۔۔۔۔۔۔ سالک وٹو
Post a Comment