نقطہ نظر: عقل اور دل کا مکالمہ

Shrine of Ameer  Khusro in India
کل رات امیر خسرو رح کا کلام " خواجہ من قبلہ من دین من ایمان من" کی ایک ریکارڈنگ راحت فتح علی کی آواز میں سنتے ہوےؑ میرا دل کی بجاےؑ دماغ حاضر ہو گیا۔ سوچا کہ کیوں نہ دماغ کو دل کی راہ پہ چلایا جاےؑ۔ اس کاوش کے نتایجؑ میری توقعات کے برعکس رہے۔۔۔

سب سے پہلی بات جو کہ دماغ نے بڑے غوروخوض کے بعد برآمد کی وہ یہ تھی کہ راحت فتح علی جو کہ اب قوال نہیں رہا، اس کو کس نے حق دیا ہے یہ مقدس کلام پڑھنے کا، جبکہ وہ راگ بھی غلط لگا رہا ہے اس میں۔۔ پھر جن کو سنا رہا ہے وہ  تو میڈیا کے لوگ ہیں جنہیں قوالی کی الف بے بھی نہیں پتا۔۔۔ آخر کار یہ شو ٹی وی کیلیے ریکارڈ ہو رہا ہے اس لیے یہ سب کام تو پیسے کیلیے ہے۔۔۔ سو یہ غلط ہے۔۔۔

اگلا مرحلہ اس سے بھی دشوار رہا۔ مسلسل سوچتا رہا کہ جو خواتین سن رہی ہیں ان کا تو لباس بھی بہت مختصر ہے، جو کہ قوالی تو کیا، شریعت کے بھی خلاف ہے۔۔ جبکہ قوالی تو سن ہی تب سکتے ہیں جب آپ شریعت کے بعد طریقت کو سمجھتے اور پورا اترتے ہوں۔۔ مرد حضرات بھی کچھ کم نہیں رہے اس دوڑ میں۔۔ سارے میڈیا والے چہروں پہ مرکوز تھے۔۔

Rahat Fateh Ali singing Kalam-e-Khusro
اچانک خیال آیا کہ جتنے لوگ سن رہے ہیں ان میں سے 99٪ کو تو فارسی آتی بھی نہیں۔۔۔ میڈیا والے اپنے اپنے مطلب کے مطابق اس کلام کے تراجم پیش کر کے نہ جانے کیا کیا گل کھلا سکتے ہیں۔۔۔ کسی ٹی وی چینل سے یہ ریکارڈنگ کسی مولوی کی سماعتوں کو ٹکراےؑ گی اور پھر شرک کا فتویٰ کلام لکھنے، گانے  اور سننے والوں پہ صادر فرما دیا جاےؑ گا۔۔۔

آخر میں دماغ کو اس مصرع " یک نگاہے گاہے گاہے از طفیل پنج تن مورے خواجہ"پہ خدا حافظ کہا اور دل نے صرف ایک بات مجھ سے پوچھی۔۔ دل کہتا کہ " یار تو کب سے خدا ہو گیا ہے جو غلط اور صحیح صادر کرنا شروع ہو گیا۔۔۔ اپنی اوقات دیکھ۔۔۔ اس بات پہ شکر ادا کر کہ اللہ نے تجھے اتنا موقع دیا کہ ایسا کلام تو بھی سن سکے ۔۔۔ ان لوگوں کی قسمت پہ رشک کر جن کو اللہ نے یہ کلام قوال کے سامنے بیٹھ کہ سننے کا موقع دیا۔۔۔ آخر کچھ تو ہو گا ان میں جو اللہ کو تجھ سے زیادہ ان میں پسند ہے۔۔ عکسی مفتی کی طرح دعا کر کہ اللہ تجھے بھی ان کو سامنے بٹھا کے سننے کا موقع دے۔۔۔  " 

بس پنج تن کے نام آتے ہی خراج اشک پیش کیا اور لیپ ٹاپ بند کر کے سو گیا۔۔۔ نہ جانے کیوں سوتے وقت اقبال رح کا یہ مصرع میرے دماغ میں گونج رہا تھا کہ

عقل عیار ہے، سو بھیس بدل لیتی ہے

Paper Horse (کاغذ کا گھوڑا) by Uxi Mufti



Cover Page
Uxi Mufti is something worth experiencing, not reading. This is because he never lived something. He always saw, observed, felt, and then absorbed. And finally he revealed his experiences as trans literature. I explained his trans literature in review of his book "Aik Din ki Baat". This book i.e. Paper Horse is the sequel of his trans literature.

"Kaghaz ka Ghora" is just a pure feeling of social inequality prevailing in bureaucrat culture of Pakistan. It also throws light upon the strategic failures of our policies and more over failure of our policy makers. It is not some taunt or negativity which he admitted on the first page of this book, but most of the times we come across such feeling while going through this book. But after reading half of this book, our feel on this book is totally different.

Uxi's own comments about Kaghaz ka Ghora
 Uxi Mufti must be regarded for below mentioned points i.e.

  1. He felt but remained positive throughout his whole service. Finally he produced Lok Virsa out of nowhere. 
  2. He absorbed his feel and finally he revealed this trans literature which is some what new as far as Pakistani writers are concerned. 
  3. He is the man who has not just lived. Every moment of his life is alive and can be experienced while sitting in front of him. 
  4. His books are one sit reads. You can even go for a cup of tea while reading his books.

Talking about this book "Kaghaz ka Ghora", he remained above criticism throughout complete book. He just highlighted the inequality and lack of positive outcome oriented policy makers. List of contents speaks itself of what all he wanted to convey through this book.

Table of contents
At the end, I must thank Sohail Taj for blessing me with such reads. I am not some literary tycoon so my lines must not be regarded as some review of this book. I just wanted to pay tribute to some one whose every cell is alive even at the age of 70+. I met Uxi Mufti twice. During meet, he never gave such feeling of being aged, elder, experienced etc. His every cell was revealing while meet.

This world is a canvas and we just paint while our stay over here. Uxi's paint is worthy of being alive as far as this world lives. This is because he lived like a feel and only feel is eternal. Good luck for your upcoming reads Sir.  I am proud of being amongst your readers. 

کاسنی کمرہ

داستان سراےؑ کا کاسنی کمرہ
فلسفہ عشق ہے، آتش کو ہوا دیتے ہیں
آو خوابوں کے جزیرے کوجلا دیتے ہیں
بہزاد
میرے خیال میں کاسنی رنگ اس شعر کے سوا کچھ نہیں۔۔۔

انسان یاد، رنگ، کیفیات اور چند احساسات کے سوا جانور ہی ہے۔ پتا نہیں کیوں مجھے ہمیشہ سے کچھ چیزیں اپنا احساس مسلسل دلاتی رہی ہیں کہ ہمیں بھی سنا، سمجھا، پرکھا ارو جیا جاےؑ۔ ایسا ہوتا ہے نا کہ کبھی کبھی  لکیر سانپ سے زیادہ پرکھی جانے لگ جاتی ہے۔ یہ ہھی ایک ایسا ہی تجربہ تھا۔۔

ہم بچپن میں غریب ہوتے تھے۔ شاید اللہ نے اپنے احسانات اور فطرت کے الطاف غرباؑ کیلیے ہی رکھے ہیں۔ گاےؑ کیلیےؑ گھاس کاٹتے ہوۓ میری بہن نے پہلی دفعہ مجھے کاسنی دکھاییؑ۔ ایک خود رو جڑی بوٹی جس کے پھول جامنی بنفشی رنگ کے تھے۔پتا نہیں کیوں اس وقت میری آنکھیں بھر آیؑیں۔ اس دن سے آج تک فالسہ اور جامن میرے پسندیدہ پھل ہیں ۔۔۔ شاید رنگ کی وجہ سے۔۔


اور جس عورت کیلیے میں پہلی دفعہ رویا اس نے ہھی اس دن اسی کاسنی رنگ کے کپڑے پہنے تھے۔۔۔ :(

پتا نہیں کیا اسرار ہے۔۔۔ شاید۔۔۔۔۔ پر شاید نہیِں، حقیقتی طور پہ کاسنی رنگ اسرار ہے۔۔۔

رنگ بھی ایک زبان ہے، ایک احساس ہے، ایک فکر ہے۔۔۔ رنگ جب سانس لیتا ہے تو رنگین مزاج سان پہ چڑھا دیے جاتے ہیں۔ صاحبو!! یہ حقیقت ہے کہ رںگ ایک پوری کی پوری زندگی ہے۔۔۔

وہ کمرہ جہاں قدرت اللہ شہاب رہا کرتے تھے۔۔
میرا اور قدرت اللہ شہاب رح کا تعلق بھی اس رنگ جتنا ہی ہے۔۔ وہ بھی اسی طرح بچپن میں سماعت کے راستےسے  رگ جاں میں اترتے چلے جا رہے ہیں۔۔ بالکل کاسنی رنگ کی طرح اس دن ہھی میرے ساتھ اچھا نہیں کیا جب میں پہلی دفعہ خود کشی کا مرتکب ہونے چلا تھا۔۔۔۔ اس دن بھی مجھے کہیں کا نہیں جس دن میں اس لڑکی سے ملا جس کے بارے میں سوچ رکھا تھا کہ میرے ساتھ چل سکتی ہے۔۔۔۔۔ اور نہ جانے کتنے دن ایسے ہیں۔۔۔ اور میں تو کچھ بھی نہیں، وہ اوروں کے ساتھ تو پتا نہیں کہاں کہاں تک چلے ہیں اور چل رہے ہیں۔۔

جب پہلی دفعہ مجھے پتا چلا کہ داستان سراےؑ میں وہ کمرہ جہاں قدرت اللہ شہاب ہمیشہ رہایؑش پذیر ہوتے تھے، کاسنی کمرا کے نام سے جانا جاتا ہے تو میرے منہ سے پہلا جملہ جو نکلا وہ یہ تھا "اچھا!!! آپ بھی کاسنی ہو؟؟؟"

نوٹ: سہیل تاج جنہوں نے اس کمرے کی تصاویر مجھے دکھایؑیں، ان کا بے حد ممنون ہوں اور اردو میں کاسنی کمرہ انہی کے کہنے پہ لکھ رہا ہوں۔۔ اس سے پہلے کاسنی کمرہ انگریزی میں لکھا تھا جو کہ یہاں پڑھا جا سکتا ہے۔۔۔ 

KASNI KAMRA (کاسنی کمرہ)

It is more like pealing off the membranes of the dark shades of our self when we inquire something regarding someone we are inspired of. But sometimes it happens that we stand mum in front of such a shade of something we have never come across. It makes us more like aliens in the wonderland.

Same happened when I came across this KASNI KAMRA shared by a friend of mine i.e. Sohail Taj, who is an eminent journalist of Pakistan. He visited Dastan Sarae (Home of Ishfaq Ahmed and Bano Qudssia in lahore) last week and shared this info in a group in the name of Mumtaz Mufti on facebook.

Kasni Kamra is the room where Qudrat Ullah Shahab used to live when he visited Lahore. I don't know colors, shades and their blends but "Kasni" color is always something which gives a feel of a blend of secrecy, beauty and silence. It is light blend of indigo and midnight blue color. It is too soothing to tell when you are alone and concentarting on a cause.

I am sharing the images of that room where Qudrat Ullah Shahab used to live. No one lives in this room anymore but still it is maintained as if someone still exists here...



Aik Din Ki Baat(ایک دن کی بات) : Only "FATWA" by Uxi Mufti

The ancient but most effective and purest form of literature is trans literature. It is never written. It is felt, observed, absorbed, remains in the junkyards of our senses and finally revealed. It is always more than words. A feel which peeps into sensations of our self and finally we are moved by its passive trans injections. I am not placing some specific example of trans literature intentionally.

Cover page of Aik Din ki Bat by Uxi Mufti
Uxi Mufti is another name of sensation. He never lived as a socio moved man or in other words he has been a failure as son, brother, father etc. Actually he is a failure as far as our standards are concerned. But being very true, he always lived as a sense. Sometimes he is an ear, eye, taste etc etc. He looks at something, feels, absorbs, and then lets it be there for the decades to come. 

He traveled to far off places of Pakistan. He felt the words still being used, saw the grains still being measured, absorbed the nothingness of poor folks of deprived masses of Pakistan, and above all remained between the senses of this land i.e. artists throughout his whole life. So he kept this whole story at the dark junkyards of his self and finally he revealed it. 

Aik Din ki Bat is the only "fatwa" revealed by this MUFTI of Pakistan. But what a fatwa he revealed. Falling short of words to define this kind of trans literature, I here admit that Mufti has bypassed minds to make his presence felt to the masses of Pakistan. This book never argues. It just peeps through our darks and at the end we stand naked in front our self. 

I am not some literary geek so few lines of mine must not be regarded as some review of this book. I just wanted to commemorate the time I passed with this book.Thanks to Mr. Sohail Taj for blessing me with such a marvelous piece of writing. Uxi Mufti has revealed his only fatwa againts Mumtaz Mufti's bulky ailiz... Lolz